وفد تصویر کے لیے پوز کر رہا ہے۔ ٹویٹر/ @ShireenMazari1
  • اسرائیل نواز سول گروپ شاراکا پاکستانی نژاد امریکی وفد کے دورہ اسرائیل کو سپانسر کرتا ہے، بظاہر پاک اسرائیل تعلقات کو فروغ دینے کے لیے۔
  • شاراکا اسرائیل کو خلیجی ممالک سے ملانے کے لیے کام کرتا ہے۔
  • سابق وزیر انسانی حقوق شیریں مزاری نے دورہ اسرائیل کو تنقید کا نشانہ بنایا۔

اسلام آباد: غیر ملکی میڈیا رپورٹس کے مطابق، پاکستانی-امریکی وفد نے بظاہر اسرائیل پاکستان تعلقات کو فروغ دینے کے لیے گزشتہ ہفتے اسرائیل کا دورہ کیا۔

یہ دورہ اسرائیل کے حامی سول گروپ شاراکا (عربی میں “شراکت”) کی طرف سے سپانسر کیا گیا تھا جو 2020 میں ابراہیم معاہدے پر دستخط اور متحدہ عرب امارات (یو اے ای) اور بحرین کی طرف سے اسرائیل کو تسلیم کرنے کے بعد قائم کیا گیا تھا۔

یہ گروپ اسرائیل کو خلیجی ممالک سے ملانے کے لیے کام کرتا ہے۔ اس وقت اس کے تین آپریشنل ڈویژن ہیں جو اسرائیل، بحرین اور متحدہ عرب امارات میں واقع ہیں۔

شاراکا نے ایک ٹویٹ میں کہا کہ “جنوب مشرقی ایشیا سے مسلمانوں اور سکھوں کے وفد کو لانا اعزاز کی بات ہے جس میں پہلے پاکستانی یہودی کو اسرائیلی صدر اسحاق ہرزوگ سے ملنے کے لیے اسرائیل جانے کی اجازت دی گئی تھی۔ مندوبین نے صدر سے اسرائیل کے ساتھ تعلقات استوار کرنے کی کوششوں کے بارے میں بات کی۔ ”

پاکستانی وفد کی سربراہی امریکا میں پاکستانی نژاد امریکی لابی انیلہ علی کر رہی تھیں۔ وفد میں پاکستانیوں کے ساتھ ساتھ دیگر ممالک کے مسلمان بھی شامل تھے۔ غیر ملکی میڈیا نے کہا کہ وفد نے اسرائیلی صدر سمیت اعلیٰ اسرائیلی قیادت سے ملاقات کی۔ پاکستانی میڈیا برادری کے کچھ ‘مشہور’ چہرے بھی وفد کا حصہ ہیں۔ کچھ تو سرکاری میڈیا کے لیے بھی کام کرتے ہیں۔

وفد میں احمد قریشی بھی شامل تھا جو سرکاری ٹی وی کا ملازم ہے۔

سابق وزیر برائے انسانی حقوق ڈاکٹر شیریں مزاری نے ایک ٹویٹ میں احمد قریشی کو تنقید کا نشانہ بنایا۔

تنقید کا جواب دیتے ہوئے، احمد قریشی نے ٹویٹ کیا: “ڈاکٹر شیریں مزاری، آج کی خود ساختہ پی ٹی آئی کی اعلیٰ اسرائیل مخالف کروسیڈر، 2005 میں ڈی جی آئی ایس ایس آئی (انسٹی ٹیوٹ آف سٹیٹجک اسٹڈیز اسلام آباد) تھیں جب ان کے باس، اس وقت ایف ایم قصوری، نے پہلی مرتبہ پاکستان کا عہدہ سنبھالا تھا۔ ترکی میں اسرائیل کی میٹنگ، جس کے بعد اسرائیل نے پاکستان کے ساتھ تجارت کرنے والے اسرائیلی تاجروں کے لیے درآمدی لائسنس کی شرط ختم کر دی، اپنے باس کو اعتراض نہ کر کے اپنی نوکری بچائی اور 2008 تک اپنے عہدے پر برقرار رہی۔

قریشی نے اپنے اسرائیلی ہم منصب کے ساتھ قصوری کی تصاویر بھی ٹویٹ کیں۔

جون 2021 میں عمران خان کی زیرقیادت حکومت کے مشیروں کے اسرائیل کے دورے کے بارے میں رپورٹس منظر عام پر آئیں۔ پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو نے تب کہا تھا کہ پاکستانی حکام کے دورہ اسرائیل کے بارے میں کچھ گڑبڑ ہے۔ چند دنوں کے بعد مشیروں نے اس دورے سے انکار کر دیا۔

ایک اسرائیلی اخبار اسرائیل ہیوم نے اسلام آباد میں اپنے ذرائع کے حوالے سے اس دورے کی اطلاع دی تھی۔ اس وقت کے مشیروں معید یوسف اور زلفی بخاری نے اس رپورٹ کی تردید کی تھی۔ ان دنوں سوشل میڈیا پر یہ خبریں بھی زیر گردش تھیں کہ چونکہ عمران خان کی سابقہ ​​شریک حیات کا تعلق یہودی گھرانے سے ہے اس لیے اسرائیل سے تعلقات استوار کرنے کی کوششیں کی جا رہی ہیں۔ ملک کی کمزور معیشت اور سیاسی بحران کی وجہ سے یہ کوششیں ناکام ہو گئیں۔ اسرائیل نے سعودی عرب، متحدہ عرب امارات، مصر، اردن اور بحرین کے ساتھ سفارتی تعلقات قائم کر رکھے ہیں۔

اصل میں شائع ہوا۔

خبر

Written by Muhammad Bilal

Subscribe For Daily Latest Jobs