جامعہ کراچی میں کنفیوشس انسٹی ٹیوٹ۔ – رائٹرز

کراچی: جامعہ کراچی کے کنفیوشس انسٹی ٹیوٹ نے منگل کو اعلان کیا ہے کہ وہ 23 مئی (پیر) سے آن لائن کلاسز دوبارہ شروع کرے گا۔

انسٹی ٹیوٹ کی جانب سے جاری کردہ ایک نوٹیفکیشن میں کہا گیا ہے کہ آپ کو مطلع کیا جاتا ہے کہ جامعہ کراچی کے کنفیوشس انسٹی ٹیوٹ میں 23 مئی سے تدریسی اور ثقافتی سرگرمیاں دوبارہ شروع کی جائیں گی۔

نوٹیفکیشن میں کہا گیا ہے کہ کلاسز “اسی شیڈول کے ساتھ آن لائن” منعقد ہوں گی۔

اس نے طلباء کو مشورہ دیا کہ وہ مزید معلومات کے لیے اپنے کلاس گروپ کی اطلاع پر عمل کریں۔

یہ بیان اس خبر کے بعد سامنے آیا ہے کہ جامعہ کراچی کے کنفیوشس انسٹی ٹیوٹ میں پڑھانے والے چینی اساتذہ اپنے ملک روانہ ہو گئے ہیں۔

گزشتہ ہفتے انسٹی ٹیوٹ کے ڈائریکٹر ڈاکٹر ناصر الدین نے کہا تھا کہ صرف کراچی یونیورسٹی ہی نہیں ملک کے مختلف کنفیوشس انسٹی ٹیوٹ کے اساتذہ کو چین نے واپس بلایا ہے۔

ڈائریکٹر نے یقین دہانی کرائی کہ انسٹی ٹیوٹ کو بند نہیں کیا جائے گا، انہوں نے مزید کہا کہ پاکستانی اساتذہ سے کہا جا رہا ہے کہ وہ مینڈارن سکھانے میں مدد کریں۔

ڈاکٹر ناصر نے کہا کہ ادارہ آن لائن کلاسز اور امتحانات کے انعقاد پر غور کر رہا ہے، انہوں نے مزید کہا کہ اس وقت انسٹی ٹیوٹ میں کم از کم 500 طلباء زیر تعلیم ہیں۔

جامعہ کراچی کا کنفیوشس انسٹی ٹیوٹ 2013 میں جامعہ کراچی اور چین کی سچوان نارمل یونیورسٹی نے مشترکہ طور پر قائم کیا تھا۔

انسٹی ٹیوٹ ایک غیر منافع بخش تعلیمی ادارہ ہے جس کا مقصد مینڈارن سکھانا، زبان اور چینی ثقافت کی بین الاقوامی تفہیم کو گہرا کرنا اور چین اور پاکستان کے درمیان لوگوں کے درمیان تبادلے کو فروغ دینا ہے۔

تاہم، انسٹی ٹیوٹ حال ہی میں اس وقت خبروں میں تھا جب 26 اپریل کو اس کے احاطے میں ہونے والے خودکش دھماکے میں تین چینی اساتذہ سمیت چار افراد ہلاک اور چار دیگر زخمی ہو گئے۔

کاؤنٹر ٹیررازم ڈیپارٹمنٹ (سی ٹی ڈی) کے مطابق، KU حملہ ایک خود کش دھماکہ تھا جو برقعہ پوش خاتون نے کیا۔

انسٹی ٹیوٹ کے باہر دوپہر 1 بج کر 52 منٹ پر دھماکہ ہوا۔ ہلاک ہونے والے چینی شہریوں کی شناخت کنفیوشس انسٹی ٹیوٹ کے ڈائریکٹر ہوانگ گوپنگ، ڈنگ موپینگ، چن سائی اور ان کے پاکستانی ڈرائیور خالد کے نام سے ہوئی ہے۔

ایک کالعدم تنظیم نے حملے کی ذمہ داری قبول کی تھی۔ سیکیورٹی اداروں نے دھماکے میں ملوث افراد کی گرفتاری کے لیے آپریشن شروع کردیا ہے تاہم ابھی تک کوئی بڑی کامیابی نہیں ملی۔

Written by Muhammad Bilal

Subscribe For Daily Latest Jobs