میٹرک کے طلباء پیر 05 جولائی 2021 کو کراچی کے ایک امتحانی مرکز میں پرچے حل کر رہے ہیں۔ — آن لائن/فائل
  • بی ایس ای کے کا کہنا ہے کہ سوالیہ پرچہ لیک ہونے کی خبروں کی تصدیق نہیں کی جا سکتی کیونکہ ان کے پاس ابھی بھی مہر بند ہے۔
  • کہتے ہیں کہ رپورٹس کی تصدیق ہو سکتی ہے ورنہ جب صبح 9 بجے پیپر ڈی سیل کر دیا جاتا ہے۔
  • دسویں جماعت کا پہلا امتحان صبح 9:30 بجے شروع ہونا ہے۔

کراچی: نویں جماعت کے بعد دسویں جماعت کے کمپیوٹر اسٹڈیز کا سوالیہ پرچہ آج ہونے والے امتحان سے دو گھنٹے قبل سوشل میڈیا پر مبینہ طور پر لیک ہوگیا۔

آج دسویں جماعت کا پہلا امتحان ہے، جو صبح 9:30 بجے شروع ہونا ہے۔ امتحانات کے دوران دھوکہ دہی کو روکنے اور امتحانی پرچوں کی تقسیم کو محفوظ بنانے کے حکومتی دعوؤں کے باوجود پرچہ تقریباً 7:30 بجے چھین لیا گیا۔

تاہم، بورڈ آف سیکنڈری ایجوکیشن کراچی (BSEK) انتظامیہ نے کہا کہ وہ ان رپورٹس کی تصدیق کرنے سے قاصر ہیں کہ پرچہ لیک ہوا ہے کیونکہ سوالیہ پرچہ ابھی تک ڈی سیل نہیں کیا گیا ہے۔

مزید پڑھ: کراچی میں نویں جماعت کا کمپیوٹر اسٹڈیز کا پیپر آن لائن لیک ہو گیا۔

ان کا کہنا تھا کہ وہ اس معاملے پر تب تبصرہ کر سکیں گے جب صبح 9 بجے پیپر ڈی سیل کیا جائے گا۔

ثانوی تعلیمی بورڈ کراچی (BSEK) کے مطابق، 360,000 سے زائد طلباء نویں اور 10ویں جماعت کا امتحان دے رہے ہیں۔ اس کے لیے کراچی کے 18 ٹاؤنز میں 448 امتحانی مراکز قائم کیے گئے ہیں۔

طلباء کو مراکز میں موبائل فون نہ لانے کی ہدایت کی گئی ہے اور سندھ حکومت نے جن علاقوں میں امتحانی مراکز قائم ہیں وہاں دفعہ 144 بھی نافذ کر دی ہے۔ آج کے امتحان میں تقریباً 158,869 طلباء بیٹھے ہیں۔

صبح کی شفٹ میں سائنس گروپ کے پیپرز لیے جا رہے ہیں جبکہ دوسری شفٹ میں جنرل گروپ کے پیپرز شیڈول ہیں۔

Written by Muhammad Bilal

Subscribe For Daily Latest Jobs