آئی ایس پی آر کا لوگو۔ – ٹویٹر
  • آئی ایس پی آر کا کہنا ہے کہ سیاسی رہنماؤں، چند صحافیوں اور تجزیہ کاروں کی جانب سے سوشل میڈیا سمیت عوامی فورمز پر ریمارکس جاری کیے جاتے ہیں۔
  • فوج توقع کرتی ہے کہ “سب قانون کی پاسداری کریں گے”۔
  • لوگوں سے اپیل کرتا ہے کہ “ملک کے بہترین مفاد میں مسلح افواج کو سیاسی گفتگو سے دور رکھیں۔”

پاک فوج نے اتوار کے روز “مسلح افواج کے خلاف غیر مصدقہ، ہتک آمیز اور اشتعال انگیز بیانات اور ریمارکس” کے پھیلاؤ کی مذمت کی اور انہیں “انتہائی نقصان دہ” قرار دیا۔

انٹر سروسز پبلک ریلیشنز (آئی ایس پی آر) کی جانب سے جاری کردہ ایک بیان کے مطابق، حال ہی میں پاکستان کی مسلح افواج اور ان کی قیادت کو ملک میں جاری سیاسی گفتگو میں گھسیٹنے کی “تیز اور دانستہ کوششیں” کی گئی ہیں۔

“یہ کوششیں مسلح افواج کے ساتھ ساتھ ان کی اعلیٰ قیادت کے براہ راست، واضح، یا باریک حوالوں سے ظاہر ہوتی ہیں، جو کچھ سیاسی رہنماؤں، چند صحافیوں اور تجزیہ کاروں نے عوامی فورمز اور سوشل میڈیا سمیت مختلف مواصلاتی پلیٹ فارمز پر کی ہیں۔”

بیان میں کہا گیا ہے کہ “غیر مصدقہ، ہتک آمیز اور اشتعال انگیز بیانات اور ریمارکس کا عمل انتہائی نقصان دہ ہے” اور مزید کہا کہ پاکستان کی مسلح افواج “اس طرح کے غیر قانونی اور غیر اخلاقی طریقوں سے سخت استثنیٰ” لیتی ہیں۔

بیان کے مطابق، فوج “سب سے توقع کرتی ہے کہ وہ قانون کی پاسداری کریں گے اور ملک کے بہترین مفاد میں مسلح افواج کو سیاسی گفتگو سے دور رکھیں گے۔”

Written by Muhammad Bilal

Subscribe For Daily Latest Jobs