وزیر دفاع خواجہ آصف۔ — اے ایف پی/فائل
  • خواجہ آصف کا کہنا ہے کہ ان کے بیان کو سیاق و سباق سے ہٹ کر پیش کیا گیا۔
  • آصف زرداری کے انتخابی اور نیب اصلاحات کے بعد انتخابات سے متعلق بیان سے اتفاق کرتے ہیں۔
  • ان کا کہنا ہے کہ ’’انتخابات کے حوالے سے فیصلہ معاشی فیصلوں پر مبنی ہوگا۔

وزیر دفاع خواجہ آصف نے بدھ کو نومبر میں ہونے والے عام انتخابات کے حوالے سے اپنے بیان کی وضاحت کرتے ہوئے کہا کہ اسے سیاق و سباق سے ہٹ کر پیش کیا گیا۔

پر خطاب کرتے ہوئے a جیو نیوز پروگرام میں آصف نے کہا کہ وہ پیپلز پارٹی کے شریک چیئرمین آصف علی زرداری کے اس بیان سے اتفاق کرتے ہیں کہ انتخابات قومی احتساب بیورو (نیب) اور انتخابی اصلاحات سے پہلے ہونے چاہئیں۔

وزیر دفاع نے کہا کہ اتحادی جماعتوں میں اصلاحات کے حوالے سے کوئی اختلاف نہیں اور حکومت اتحادیوں سے مشاورت کے بعد انتخابات کرائے گی۔

ان کا کہنا تھا کہ قانون سازی کے بعد انتخابات ہوں گے۔

آصف نے کہا کہ معاشی صورتحال سے متعلق اہم فیصلے آئندہ 24 گھنٹوں میں کیے جائیں گے، انہوں نے مزید کہا کہ سیاسی فیصلوں کا وقت ہے معاشی فیصلوں کا نہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ اس وقت معاشی محاذ پر ہنگامی صورتحال ہے۔

مسلم لیگ (ن) کے رہنما کا کہنا تھا کہ حکومت مشکل فیصلے کرنے کے لیے تیار ہے، معاشی محاذ پر معاملات سنبھالنے کے بعد حکومت فیصلہ کرے گی کہ انتخابات کب کرائے جائیں۔

پی ٹی آئی حکومت پر تنقید کرتے ہوئے آصف نے کہا کہ حکومت عمران خان کے غلط کاموں کا خمیازہ کیوں اٹھائے؟

انہوں نے مزید کہا کہ ہم قوم کو بتائیں گے کہ ان مشکل فیصلوں کی ذمہ دار پی ٹی آئی ہے۔

دوسری بات کرتے ہوئے ۔ جیو نیوز پروگرام سے قبل آصف نے کہا تھا کہ ان کے دور میں ان سے چیف آف آرمی اسٹاف کی تقرری کے بارے میں پوچھا گیا تھا۔ بی بی سی انٹرویو، جس میں انہوں نے کہا کہ حکومت ان کی تقرری کا فیصلہ کرے گی۔

نئے آرمی چیف کی تقرری سے قبل پاکستان میں انتخابات کا امکان

کے ساتھ ایک انٹرویو میں بی بی سی اردو اس سے قبل دن میں وزیر دفاع نے کہا تھا کہ نئے آرمی چیف کی تقرری سے قبل پاکستان میں عام انتخابات نومبر میں ہونے کا امکان ہے۔

وزیر دفاع نے کہا کہ نگراں حکومت نومبر سے پہلے رخصت ہو سکتی ہے اور نئی حکومت برسراقتدار آئے گی۔

آصف نے مزید کہا کہ اگر لیفٹیننٹ جنرل فیض حمید کا نام سنیارٹی لسٹ میں ہوگا تو مخلوط حکومت ان پر اس عہدے کے لیے غور کرے گی۔ انہوں نے زور دے کر کہا ’’سینیارٹی لسٹ میں موجود تمام ناموں پر غور کیا جائے گا۔

انہوں نے کہا، “فوج کا ایک تقدس ہے اور اسے عوامی سطح پر بحث کا موضوع نہیں ہونا چاہیے،” انہوں نے مزید کہا کہ آرمی چیف کی تقرری کے عمل کو اب “ادارہ سازی” ہونا چاہیے جس طرح عدلیہ میں ہوتا ہے۔

Written by Muhammad Bilal

Subscribe For Daily Latest Jobs