وزیر داخلہ رانا ثناء اللہ۔ – ریڈیو پاکستان
  • حکومت نے لوگوں کو بدنام کرنے کے لیے مواد استعمال کرنے والوں کے خلاف کریک ڈاؤن شروع کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔
  • “انٹرنیٹ پر غیر اخلاقی مواد پھیلانے والے افراد کو گرفتار کیا جائے گا،” وہ کہتے ہیں۔
  • ان کا کہنا ہے کہ “ہم لوگوں کو سوشل میڈیا کا استعمال کسی کی تذلیل کرنے کی اجازت نہیں دیں گے۔”

اسلام آباد: وزیر داخلہ رانا ثناء اللہ نے جمعہ کو کہا کہ حکومت نے سوشل میڈیا پر ’فحش اور غیر اخلاقی مواد‘ شیئر کرکے لوگوں کو بدنام کرنے والوں کے خلاف کریک ڈاؤن شروع کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ وزیراعظم شہباز شریف کی ہدایت پر انٹرنیٹ پر غیر اخلاقی مواد پھیلانے والوں کو گرفتار کیا جائے گا، انہوں نے مزید کہا کہ وزیراعظم نے ہدایت کی ہے کہ اس قسم کے مواد کو برداشت نہ کیا جائے۔

حکومت کا یہ اعلان سابق وزیر اعظم عمران خان کے اس بیان کے بعد سامنے آیا ہے جب انہوں نے کہا تھا کہ ان کے مخالفین نے “کمپنی کی خدمات حاصل کی ہیں جو ان کی کردار کشی کی تیاری کر رہی ہیں۔”

وزیر داخلہ نے کہا کہ “ہم لوگوں کو سوشل میڈیا کو کسی کی تذلیل کے لیے استعمال کرنے کی اجازت نہیں دیں گے،” انہوں نے مزید کہا کہ ایسے واقعات کو روکا جائے گا جس میں مواد کو بلیک میلنگ کے لیے استعمال کیا جاتا ہے۔

انہوں نے کہا کہ حکومت ملوث افراد کے ساتھ سختی سے نمٹے گی۔ ثناء اللہ نے کہا، “ہم اس گندگی کو پھیلانے والوں کا صفایا کر دیں گے،” انہوں نے مزید کہا کہ اس سلسلے میں وفاقی تحقیقاتی ادارے (ایف آئی اے) اور متعلقہ حکام کو ہدایات بھیج دی گئی ہیں۔

’شریف کردار کشی کی تیاری کر رہے ہیں‘

اس ہفتے کے شروع میں نشر ہونے والے ایک انٹرویو میں، عمران خان نے دعویٰ کیا تھا کہ شریفوں نے ایسی کمپنیوں کی خدمات حاصل کی ہیں جو ان کے “کردار کے قتل” کی تیاری کر رہی ہیں۔

چیئرمین نے پی ٹی آئی کے حمایت یافتہ سوشل میڈیا اکاؤنٹس کی طرف سے بار بار انتباہات کو مخاطب کیا جس کو اس نے “گہری جعلی ویڈیوز” قرار دیا۔

ڈیپ فیک ویڈیوز مصنوعی ذہانت کی ایک شکل کا استعمال کرتی ہیں، جسے ڈیپ لرننگ کہتے ہیں، لوگوں کی زندگی جیسی لیکن جعلی ویڈیوز بنانے کے لیے۔

“اب جب کہ عید ختم ہو چکی ہے، آپ دیکھیں گے کہ وہ میرے کردار کے قتل کے لیے پوری طرح سے تیار ہیں۔ انہوں نے ایسی کمپنیوں کی خدمات حاصل کی ہیں جو اس شمار پر مواد تیار کر رہی ہیں،” انہوں نے مزید کہا کہ انہیں مافیاز کا سامنا کرنا پڑا، جن میں سے سب سے بڑی وجہ یہ تھی۔ شریف مافیا

جمائما گولڈ اسمتھ کے خلاف مہم کے حوالے سے ان کا کہنا تھا کہ ’’ماضی میں میری سابقہ ​​اہلیہ کو بھی نشانہ بنایا گیا تھا اور ان پر یہودی لابی کا حصہ ہونے کا الزام لگا کر ان کے خلاف مہم چلائی گئی تھی۔ اسی طرح اس کے خلاف ملک سے قدیم ٹائلیں برآمد کرنے کا الزام لگا کر اس کے خلاف ایک جھوٹا مقدمہ درج کیا گیا۔

Written by Muhammad Bilal

Subscribe For Daily Latest Jobs